بھارت میں احتجاج کے باعث نیٹ فلکس نے فلم ’ اناپورانی‘ ہٹا دی

بھارت میں ہندو قوم پرست تنظیموں کی جانب سے شدید احتجاج کے باعث نیٹ فلکس نے تامل فلم ’اناپورانی دا گوڈیس آف فوڈ‘ پلیٹ فارم سے ہٹا دی۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق تامل فلم اناپورانی گزشتہ سال 28 دسمبر کو او ٹی ٹی پلیٹ فارم نیٹ فلکس پر ریلیز ہوئی تھی اس فلم کو ٹرائیڈنٹ آرٹس، زی اسٹوڈیو اور ناڈ اسٹوڈیوز نے پروڈیوس کیا۔

اس فلم میں بھارت کی جنوبی ریاست تامل ناڈو میں ایک مندر کے پنڈت کی بیٹی کو اپنے خاندان کی خواہش کے خلاف گوشت پکاتے اور کھاتے ہوئے بھی دکھا یاگیا۔

حال ہی میں فلم کو اس کے ہندو مخالف مواد کی وجہ سے ہندو قوم پرست تنظیموں کی جانب سے کافی تنقید کا سامنا کرنا پڑا اور اس فلم پر مذہب کی تبدیلی کو فروغ دینے، ہندو دیوتا کو غلط طریقے سے پیش کرنے اور ہندوؤں کے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانے کا الزام لگایا گیا۔

فلم کے پروڈیوسرز کے خلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے پولیس میں شکایت بھی درج ہوئیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق 6 جنوری کو شیوسینا کے سابق لیڈر اور ہندو آئی ٹی سیل کے بانی رمیش سولنکی نے فلم پروڈیوسرز کے خلاف پولیس میں شکایت درج کرائی اور ہندو مخالف موادکے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔

تاہم اب فلم کے پروڈیوسرز نے  ہندو تنظیموں سے  مذہبی جذبات کو مجروح کرنے پر معافی مانگ لی۔

بھارتی انٹر ٹینمنٹ کمپنی زی اسٹوڈیو نے اپنی فلم ’اناپورانی دا گوڈیس آف فوڈ‘ میں ہندوؤں کے مذہبی جذبات کو مجروح کرنے پر معافی مانگتے ہوئے  اور فلم کو او ٹی ٹی پلیٹ فارم سے ہٹانے کا اعلان کیا۔

زی اسٹوڈیو کی جانب سے کہا گیا کہ  فلم کے متنازع حصوں پر کام کیا جائے گا اور جب تک فلم میں تبدیلی نہیں کی جاتی اسے نیٹ فلکس سے ہٹادیا جائے  گا۔

تاہم بھارتی میڈیا کے مطابق نیٹ فلکس نے 11 جنوری کو فلم اپنے پلیٹ فارم سے ہٹادی ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.