منظم سازش کے تحت سیا سی رہنمائوں پر قاتلانہ حملے کر کے انہیں سیا ست سے دور رکھنے کی کوشش کی جا رہی ہے، رہنما جمعیت نظریاتی

کوئٹ  جمعیت علماء اسلام نظریاتی کے مرکزی سینئر نائب امیر مولانا عبد القادر لونی نے کہا ہے کہ ملکی سطح پر ایک منظم سازش کے تحت سیا سی رہنمائوں پر قاتلانہ حملے کر کے انہیں سیا ست سے دور رکھنے کی کوشش کی جا رہی ہے ، ڈی آئی جی پو لیس کوئٹہ کہتے ہیں ہمیں کوئی خطرہ نہیں، اب ہمیں بتایا جائے کہ کس نے قاری مہر اللہ پر حملہ کیا ؟ حکومت کو 15 تاریخ تک مطالبات تسلیم کرنے کی ڈیڈ لائن دے رہے ہیں بصورت دیگر ملکی سطح پر احتجاج کی کال دیں گے۔یہ بات انہوں نے جمعرات کو قاری مہر اللہ، عبد الستار شاہ چشتی ، مولانا رحمت اللہ حقانی سمیت دیگر کے ہمراہ کوئٹہ پریس کلب میں پریس کانفر نس کر تے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہاکہ گزشتہ دو ماہ سے انتظامیہ کو جن خدشات سے آگاہ کر رہے تھے وہ ہو گیا قاری مہر اللہ پر فجر کی نماز کے بعد حملہ کیا گیا جس کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں گزشتہ سال چمن میں ہمارے جلسہ میں بھی دھماکہ کیا گیا انتظامیہ نے سیکورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا ڈیڑھ ماہ سے پولیس اور دیگر حکام سے رابطے میں ہیں لیکن ہمیشہ کی طرح ٹال مٹول سے کام لیا جارہا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ہماری زندگیوں کو خطرہ ہے ڈی آئی جی پو لیس کوئٹہ کہتے ہیں

ہمیں کوئی خطرہ نہیں، اب ہمیں بتایا جائے کہ قاری مہر اللہ پر کس نے حملہ کیا ؟ حکومت کو 15 تاریخ تک مطالبات تسلیم کرنے کی ڈیڈ لائن دے رہے ہیں بصورت دیگر ملکی سطح پر احتجاج کی کال دیں گے ۔ انہوں نے کہاکہ ان حالات میں جمعیت علماء اسلام نظریاتی کیسے الیکشن کمیپین چلا سکتی ہے لیکن ہم پھر بھی کہیں گے کہ الیکشن وقت پر ہو نے چاہیے ، قاری مہر اللہ پر ہو نے والے حملے کا تعلق الیکشن سے نہیں ہم پر مسلسل حملے کئے جا تے رہے ہیں ۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.